Today We Came With Sad Poetry Collection.In This Post You Will Find Sad Poetry, Sad Love Poetry, Emotional Poetry, Heart Touching Poetry. Give It A Look. Hope You Will Like It.





Usny Dekha Hi Nahi Warna Ye Aankh
Dil Ka Ahwaal Kaha Krti Hy


Mery Tou Dard Bi Auron K Kaam Aaty Hen
Me Ro Paron Tou Kai Log Muskuraty Hen


Mujh Sy Na Mil Saky Ga Aap Ka Mizaaj
Mujh Ko Tou Chay B Kali Pasand Hy


Aur Phr Hum Boht Thak Jaty Hen
Zindagi Sy, Waqt Sy, Halaat Sy, Logo Sy, Khud Sy


Ik Sitary Ki Surat Pe Marta Hu Me
Warna Chand Tou Qadmon Me Pary Rehty Hen


Aana Parast Hu Me Toot Jao Ga Lekin
Tmhy Kabi Na Kahu Ga K Yaad Aaty Ho


Ye Jo Krty Ho Tm Ishq Me Hisaab Kitaab
Ham Jo Krny Bethy Tou Khareed Le Gy Tmhy


Yahan Mukhtalif Shaklon Me Sirf Dokhay Hen. 


تری خاک بھی، تری پھونک بھی
مرا کیا ہے میرے وجود میں
میں، کہ مخمصوں کا اُدھیڑ بُن
وھی خواہشوں کے وقود میں
نہ نفَس، نہ نفْس، نہ پَل، نہ بَل
مرا غیب میں نہ شہود میں
مجھے رحم و عفو سے ڈھانپ لے
میں گُھلا پڑا ہوں سجود میں




*حسین چہرہ، قتیل آنکھیں..* 
*دلیل ، منطق ، وکیل آنکھیں*

*یہ تَشنہ کاموں‌ کی خانقاہیں‌.*
*ہیں آبِ خُم کی سبیل آنکھیں‌*

*مجاورِ   آبِ   انگبیں‌  ہیں‌....!!!!*
*سبوُ، سمندر، یہ جھیل آنکھیں‌*

*میں خواب بن کے گُزر رہا ہوں.* 
*وہ لاکھ کرلے فصیل آنکھیں..!!* 

*پرائے زخموں‌ کی پرورش میں‌*
*لو ہو گیئں‌ خود کفیل آنکھیں‌..* 

*ہیں اس اندھیرے میں کہکشائیں* 
*میں دے رہا ہوں دلیل،  آنکھیں..!!*



اب کون کہے تم سے
میں یاد اگر آؤں
کچھ دیپ جلا لینا

اب کون کہے تم سے
سوکھے ہوئے پیڑوں کو
ہر بات سنا لینا

اب کون کہے تم سے
اجڑے ہوئے لوگوں سے
خاموش دعا لینا

اب کون کہے تم سے
بے کار اذیت میں
مت خود کو گنوا لینا

اب کون کہے تم سے
کوئی رو کے منائے تو
سینے سے لگا لینا

اب کون کہے تم سے
بے عیب نہیں کوئی
تم عیب چھپا لینا


تیرے ہجراں یار مکا چھڈیاۓ ھو گیا اے مندڑا حال اے
انج دشمنڑ سجنڑ کریندے نیں جیویں کیتی تئیں میرے نال اے
جدوں بخت دا سورج ڈھل ویسی میرا اوسیا سجنڑ خیال اے
پچھے ملکھ نوں آکھسیں رو رو کے ہائی ابر بڑا لجپال اے



یہ جو دیوانے سے دو چار نظر آتے ہیں
ان میں کچھ صاحبِ اسرار نظر آتے ہیں

تیری محفل کا بھرم رکھتے ہیں سو جاتے ہیں
ورنہ یہ لوگ تو بیدار نظر آتے ہیں

دور تک کوئی ستارہ ہے نہ کوئی جگنو
مرگِ اُمید کے اسرار نظر آتے ہیں

میرے دامن میں شراروں کے سوا کچھ بھی نہیں
آپ پھولوں کے خریدار نظر آتے ہیں

کل جسے چھو نہیں سکتی تھی فرشتوں کی نظر
آج وہ رونقِ بازار نظر آتے ہیں

حشر میں کون گواہی میری دے گا ‘ ساغر ‘
سب تمہارے ہی طرفدار نظر آتے ہیں

ساغر صدیقی



جیویں خلق توں خبراں سنڑدے ہاسے میرے سجنڑ وی بختاں تائیں ھن،،
میں وی بخت دے عین دوپہر ڈٹھے کدی جگ توں گھنڑیاں بانہیں ھن،،
سروں بخت دا ڈینہہ کجھ کرن دی ڈھل پئ جاپے اگے دے سجنڑ ادائیں ھن،،
گیا ہر کوئی کلیہاں چھوڑ پچھے بڈی دیگر تے راءسائیں ھن



چلو ٹھیک اے تیرے شہر دے وچ تیرے سجن امیر وی راہندن 

اسے شہر اچ تیریاں زلفاں دے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کئ ہور اسیر وی
 راہندن 

کدی شاہ ھن تیری سنگت چا کیتے۔۔ اوہ لوگ حقیر وی 
راہندن 

تیرے ناطق تاج محل دے نیڑے۔۔۔ جھگی دار فقیر وی 
راہندن




اج ثالب دل تے  ہتھ رکھ کے  کریں میری کال اٹینڈ اے 

تیری یاد بے چین پئی کردی اے یا کر دے میسج سنڈ اے

دلوں کڈھ چھڈ ڈر مخلوق دا اج رلے کریئے وقت سپنڈ اے

بھاویں دنیا سڑدی سڑ جاوے میرا توں ای بیسٹ فرینڈ اے


Thanks For Visiting. Hope You Like It.                                       

Post a Comment

Previous Post Next Post