Welcome All Friends. Today We Came With A Post Which Have Best Collection Of Love Poetry. Give It A Look. Hope You Will Like It. 





Tery Hath Me Mera Hath Ho
Saari Duniya Jal K Khaaq Ho


Ku Chupaty Ho Ku Inkaar Krty Ho
Tmhari Aankhein Kehti Hen Tm B Pyar Krty Ho


Apni Saanso K Daman Me Chupa Lo Mujh Ko
Teri Rooh Me Utar Jasnny Ko Je Chahta Hy


Mery Naam K Sath Tmhary Naam Ka Sahara Chahiye
Samajh Gy Na Tm Ya Koi Aur Ishara Chahiye


Rooh Sy Agr Tmny Muhabbat Ki Hy Tou
Ye Dekhny, Choony Ki Khawahish Kesi


Ham Apni Is Adha Pr Thora Garoor Krty Hen
Nafrat Ho Ya Muhabbat Dono Bar Poor Krty Hen


Kitna Pyar Krty Hen Tm Sy Hmy Kehna Nahi Aata
Bus Itna Janty Hen Tmhary Bin Rehna Nahi Aata


Saadiyon Ishq Goonja Ga Mera
Tery Dil Ki Mehrabo Me


بات ایسی ہے کہ دنیا نہیں سمجھے گی اسے

زخم ایسا ہے کہ شعروں میں نہیں آئے گا

زیر کرنا ہے کسی اور ہی حربے سے اسے

ایسا چالاک ہے باتوں میں نہیں آئے گا



چراغ ہو گیا بدنام کچھ زیادہ ہی 
کہ جل رہا تھا سر بام کچھ زیادہ ہی

ترے بھلانے میں میرا قصور اتنا ہے 
کہ پڑ گئے تھے مجھے کام کچھ زیادہ ہی

میں کتنے ہاتھ سے گزرا یہاں تک آتے ہوئے
مجھے کیا گیا نیلام کچھ زیادہ ہی 

تمام عمر کی آوارگی بجا لیکن 
لگا ہے عشق کا الزام کچھ زیادہ ہی


مسئلہ حل ہوا؟  ہوا کہ نہیں؟
ہم سا کوئی ملا؟ ملا کہ نہیں؟

چھوڑ یے ہم کو؛ ہم تو بےدل ہیں
آپ کا دل لگا  ؟ لگا کہ نہیں!!؟



‏رَوِش رَوِش ھے ، وھی انتظار کا موسم 
نہیں ھے کوئی بھی موسم ، بہار کا موسم 

گراں ھے دل پہ ، غمِ روزگار کا موسم 
ھے آزمائشِ ، حسنِ نگار کا موسم 

خوشا ، نظارۂ رخسارِ یار کی ساعت 
خوشا ، قرارِ دلِ بے قرار کا موسم 

حدیثِ بادہ و ساقی نہیں تو ، کس مصرف ؟؟
خرامِ ابرِ سرِ کوھسار کا موسم 

نصیب صحبتِ یاراں نہیں ، تو کیا کیجیے
یہ رقص ، سایۂ سرو و چنار کا موسم 

یہ دل کے داغ تو دُکھتے تھے ، یوں بھی پر کم کم 
کچھ اب کے اور ھے ، ھجرانِ یار کا موسم 

یہی جُنوں کا ، یہی طوق و دار کا موسم 
یہی ھے جبر ، یہی اختیار کا موسم 

قفس ھے بس میں تمہارے ، تمہارے بس میں نہیں 
چمن میں آتشِ گل کے ، نکھار کا موسم 

صبا کی مست خرامی ، تہِ کمند نہیں 
اسیرِ دام نہیں ھے ، بہار کا موسم 

بلا سے ھم نے نہ دیکھا ، تو اور دیکھیں گے 
فروغِ گلشن و صَوتِ ھزار کا موسم



سَنگ سَنگیاں نال وکھیندا اے ساڈے سنگتی کہیں دےسنگ کر گئے
دل آہدا ہائی موت خرید لویوے او ایڈا دل مظلوم دا تنگ کر گئے
ویکھے ایہو جہے منظر ہائے قسمت اکھیاں تے دل دی جنگ کر گئے
ونج وسے ہن غیر دےرنگ پوروِچ سنجاقمرغریب دب جھنگ کر گئے


اِس کے  سوا کوئی  مجھے آزار نہیں ہے
جو مجھ کو میسر ہے وہ درکار نہیں ہے

آباد  ہے  یہ  عالمِ خاکی  مرے  دم  سے
لیکن مجھے اس بات پہ اصرار نہیں ہے

اب مجھ سے ترا بار اُٹھایا نہیں جاتا
لیکن  یہ مرا  عجز ہے  انکار نہیں ہے

لے تیرے کہے پر میں تجھے چھوڑ رہا ہوں
اور یہ بھی  بتا دوں  کہ یہ ایثار  نہیں ہے

چُپ ہوں کہ نہ ہونے ہی میں ہے فائدہ میرا
ورنہ  مجھے  ہونا   کوئی  دُشوار  نہیں  ہے

*اکبر معصوم*


Thanks For Visiting. Hope You Like it.                                                                            

Post a Comment

Previous Post Next Post