If you are looking for a best collcollec of Sad poetry then this post is only for you. In this post we have pprovide you with a best collection of Sad Poetry. Give It A Look.






Jab Larki Ko Muhabbat Di Jay
Tou wo Har Kami Pe Guzara Kr Leti He


Kafiron Se Badtar Hen Ye Beech Raasty 
Me Chor Jany Waly


Jahan Qatray Ko Tarsaya Gya Hu
Wahi Duba Huva Paya Gaya Hu


Ay Dil Kisi Ki Yad Me, Hota He Be Qarar Ku
Jisny Bhula Diya Tujhy, Iska He Intizaar Ku


Tum Aur Kisi K Ho Tou Hum Aur Kisi K Hen
Aur Dono Hi Qismat Se Shikayat Nahi Karty


Laga Kr Aag Is Dil Ko Chlay Ho Tum Kaha Mohsin
Abhi Tou Rakh Urnay Do Tamasha Aur Bhi Ho Ga


Anjaani Raho Me Tou Kya Dhondta Rahy
Door Jisko Samjha Wo Tou Paas He Tery

Tumhy Tou Khair Hum Krdy Ge Rukhsat
Khuda Jany Phr Hum Apna Kya Kry Ge

Mubarak Ho Huvay Ho Surkhuru Tum
Tumhary Naam Ka Taana Para He Humy

Chun De Kabi Deewaar Me Ik Roz Mujhy Bhi
Muddat Sy Teri Raah Me Pathar Sa Para Hu

Raasta Tumny Badla Tha
Manzil Hmarai Badal Gai

Mein Taaluq Hu Toot Jao Ga
Hawala Ho Tum Yaad Ao Ge

Ab Wo Yaad Bhi Ay Tou Chup Rehty Hen
K Aankhon Ko Khabar Hui Tou Baras Jay Ge

Pehlay Tou Usny Gham K Fawaid Byan Kiye
Phr Waqfa Le Kr Kehny Lagy Khush Raha Kro

Masla Ye Nahi K Tery Hen
Masla Ye He K Sirf Tery Hen

*میں شام کے منظر میں ہوں تحلیل شدہ اور*
*تم! دور کسی گاؤں کی مغرب کی اذاں ہو* 

*دیجیئے بد دعائیں جی بھر کے
*اگر ہم مر گئے تو آپ کا شکریہ۔۔۔

*ﭘﮩﻠﮯ ﺗﻮ ﺍُﺱ ﻧﮯ ﻏﻢ ﮐﮯ ﻓﻮﺍﺋﺪ ﺑﯿﺎﮞ ﮐﺌﮯ
*ﭘﮭﺮ ﻭﻗﻔﮧ ﻟﮯ ﮐﮯ ﮐﮩﻨﮯ ﻟﮕﺎ، ' ﺧﻮﺵ ﺭﮨﺎ ﮐﺮﻭ

*اب وہ یاد بھی آئے تو چپ رہتے ہیں* 
*کہ آنکھوں کو خبر ہوئی تو برس جائیں گی*

*ﻣﯿﮟ ﺗﻌﻠﻖ ﮨﻮﮞ ﭨﻮﭦ ﺟﺎﺅﮞ ﮔﺎ*
*ﺗُﻢ ﺣﻮﺍﻟﮧ ﮨﻮ ﯾﺎﺩ ﺁﺅ ﮔﮯ*

*ہچکیاں ہو گئیں کیوں آج گلے کا پھندہ ؟*
*ہائے کس وعدہ فراموش کو ہم یاد آئے ؟*

*راستہ تم نے بدلا تھا*
*منزل ہماری بدل گئ...!*


*چُن دے کبھی دیوار میں اک روز مجھے بھی..!!*
*مُدت سے تیری راہ میں پتھر سا پڑا ہوں..!!*

*مبارک ہـو، ہوئے ہو سرخرو تـم*
*تمہارے نـــام کــا طعنہ پڑا ہے ہمیں..!!*

تُمھیں تو خیر ہٙم کر دیں گے رُخصٙت،
خُدا جانے پِھر اپنا کٙیا کٙریں گے

چلوآج ایسا کرتے ہیں،درد سے الجھتے ہیں
بےتحاشا روتے ہیں،ضبط چھوڑ دیتے ہیں

تمام عمر کی آوارگی پہ بھاری ہے 
وہ ایک شب جو تری یاد میں گزاری ہے 

سنا رہا ہوں بڑی سادگی سے پیار کے گیت 
مگر یہاں تو عبادت بھی کاروباری ہے 

نگاہ شوق نے مجھ کو یہ راز سمجھایا 
حیا بھی دل کی نزاکت پہ ضرب کاری ہے 

مجھے یہ زعم کہ میں حسن کا مصور ہوں 
انہیں یہ ناز کہ تصویر تو ہماری ہے 

یہ کس نے چھیڑ دیا رخصت بہار کا گیت 
ابھی تو رقص نسیم بہار جاری ہے 

خفا نہ ہو تو دکھا دیں ہم آئنہ تم کو 
ہمیں قبول کہ ساری خطا ہماری ہے 

جہاں پناہ محبت جناب شبنمؔ ہیں 
زبان شعر میں فرمان شوق جاری ہے 

      
اپنا  مقام  دنیا  سے  ھمیشہ  الگ  بنا کر چلتا ہوں️-
نظریں  نیچی  پر سر ھمیشہ  اٹھا  کے  چلتا  ہوں

‏ہم نے سنا تھا دوست وفا کرتے ہیں 
‏جب ہم نے کیا بھروسہ روایت ہی بدل گئی

پیچھے کون کیا بولتا ہے فرق نہیں پڑتا 
سامنے کسی کا منہ نہیں کھلتا یہی کافی ہے 

میری دوستی میں وفاداری شرط ہے
ورنہ پالنے کے لیے میرے پاس کتوں کی کمی نہیں

سجدے نہیں کیۓ کبهی ہم نے غیروں کے سامنے
 جس چیز کی ضرورت پڑتی ہے خدا سے مانگ لیتے ہیں

کتنی برکت ہـے تیرے عــــــشق میں
جب سـے ہوا ہـے بڑھتا ہی جار ہا ہـے،

کوئی اور ہی کام سونپ دو مجھے اب تم
یہ کیا تجھے سوچنا اور سوچتے ہی رہنا

کتنے ظالم ہیں زندان کے نگہبان محسن 
آنکھ  لگتی ہے تو  زنجیر  ہلا  دیتے ہیں

بدل گئے میرے موسم تو یار اب آئے۔۔۔۔۔
غموں نے چاٹ لیا غمگسار اب آئے۔۔۔۔۔۔

قوس و قزاح کے رنگ تھے میرے خلوص میں
‏احباب سارے رنگوں کے اندھے ملے مجھے

مجھے غربت کا کافی مسئلہ ہے
محبت   کا    اضافی  مسئلہ ہے

جسے دیکھو اسی کی جان ہے وہ
ادھر  تہزیب حافی  مسئلہ  ہے

کون پہنے گا سیاہ لباس ہمارے واسطے
ہماری موت پر کون نوحہ گری کرے گا


ہم سے بڑھائیے نہ راہ و رسم کہ ہم لوگ
مل کر کریں اداس بچھڑ کر کریں اداس

رنگ پھیکے ہیں کائنات کے سب
ایک چہرے پہ کیا اداسی ہے


ہم فقیر لوگ ہیں ہمیں کسی سے کیا غرض بس جن سے محبت ملتی اسی کے ہو جاتے ہیں

‏وہ معجزے سکوت کے ہم کو بھی کر عطا
ہم حالِ دل سنائیں ..مگر.. گفتگو نہ ہو

اپ کے ہاتھ میں گھڑی حضور
اور مجھے وقت سے مثائل ہیں

‏میں کیا کروں مجھے اظہار تک نہیں آتا
ھے اُس سے پیار مگر پیار تک نہیں آتا

‏مری کلائی پہ پنسل سے جو بنائی گئی
گھڑی وہ چلتی ہے یہ ماجرا،علیحدہ ہے


ﺗﻤﮩﺎﺭﺍ ﻧﺎﻡ ﮐﺴﯽ ﺍﺟﻨﺒﯽ ﮐﮯ ﻟﺐ
ﭘﮧ ﺗﮭﺎ
ﺑﺎﺕ ﺫﺭﺍ ﺳﯽ ﺗﮭﯽ ﻣﮕﺮ ﺩﻝ ﭘﮧ
ﻟﮕﯽ ﺑﮩﺖ۔

فرطِ درد سے میں نےانگلیوں کی *پوروں پر،* 

اشک جب سمیٹے تھے،آپ بھی تو بیٹھے تھے

‏شہر کا شہر خوبصورت یے 

آپ کیا ہر مکاں میں رہتے ہیں؟

‏" وہ چاہتا تو یہ حالات ٹھیک ہو جاتے"
بِچھڑنے والے سبھی ایسا سوچتے ہوں گے.

            Thanks For Visiting. Hope You Like It and Keep Visiting.

Post a Comment

Previous Post Next Post