Welcome Friends. We are Back with New Collection of Sad Poetry. Give It A Look. We Hope You Will Like It.





Boht Krti Thi Muhabbat Muhabbat
Khair Ab Tou Baat Bi Nahi Krti


Kisi Akeli Shaam Ki Chup Mein
Geet Purany Gaa Kr Dekho


Ajeeb Kshmakash He K Jaan Kis Ko De


Dill Na Lagy Ga Tery Baad
Par Tery Baad Hum Kaha


Dil Ko Kya Ho Gya Khuda Jany
Ku Hy Aisa Udaas Kya Jany


Kisi Se Raabtay Itny Shadeed Ho Gy Hen
K Hum Lary B Nahi Aur Shaheed Ho Gy Hen


Pyaar Se Bhi Zaroori Kai Kaam Hen

Bus Yuhi Choor Diya Usny Mujhy
Hay Usny Mujhy Aazmaya Bhi Nahi

Betha He Ku Udaas Wo Dilbar Ki Yaad Mein
Mujh Se Tou Keh Raha Tha Muhabbat Fazool He

Dard Mein Kar Deta He Aur Bhi Azafa
Tery Hoty Huvy Kisi Aur Ka Dilasa Dena

Apna Hi Aks Aj Tou Dundla Lga Mujhy
Mein Hu Udaas Ya Mera Sheesha Udaas He

Jaany Do Sahib Itny Shilway
Lagta He Muhabbat Nahi Ehsaan Krtay Ho

Aaj Kuch Bhi Nahi He Kehny Ko 
Samjho K Aaj Me Hu Hi Nahi

Adab Kro Hmari Khamoshi Ka 
K Ye Tmhari Bakwas Ki Murshad Hen

Zindagi Thak K Girti He Tou Khayal Aata He
Jaan Leva He La Hasil Ki Tamnah Krna

Zindagi Jab Hisaab Mangy Gi
Tery Waady Utha Laay Gy

Kabi Tou Khatam Ho Gi Ye Udasiyan Ye Tanhaiyan
Ik Din Tou Acha Ho Ga Chaar Din Ki Zindagi Mein

Ye Gard Beth Jay Tou Maloom Kr Saku
K Aankhein Nahi Rahi K Tamasha Nahi Raha

Mein Mar Mit Bhi Jaon Uski Ak Awaaz Par
Magr Wo Mery Har Waaday Ko Sarkari Samjhta He

Baarish Hoi Tou Ghr K Dareechay Se Lg Kr Hum
Chup Chaap Sog Waar Tumhy Sochtay Rahy

Aa Tou Jao Magr Tmhary Khat
Ehly Qufa Se Miltay Jultay Hen

Tumhari Bakhshish HarGiz Na Ho Gi
Tmny Ak Sayad Zady Ka Dil Dukhaya He

Ja Tujhy Hashar Tak Ki Muhlat Di
Tujh Se Badla Mera Khuda Le Ga


اپنا ہی عکس آج تو دھندلا لگا مجھے۔۔۔
میں ہوں اُداس یا میرا شیشہ اداس ہے۔۔۔

جانے دو صاحب اتنے شکوے
لگتا ہے محبت نہیں احسان کرتے ہو

ادب کرو ہماری خاموشی کا کہ یہ
تمھاری بکواس کی مرشد ہے

‏زندگی تھک کے گرتی ہے تو خیال آتا ہے
جان لیوا ہے لا حاصل کی تمنا کرنا

طوفاں سے جب ٹکرا گئے پھر آر کیا اور پار کیا
جب چل پڑے تو چل پڑے پھر تیر کیا تلوار کیا۔

‏زنـدگی جب حساب مانگے گی
تیرے وعدے اُٹھا کے لائیں گے

اب کے بارش میں تو یہ کار زیاں ہونا ہی تھا
اپنی کچی بستیوں کو بے نشاں ہونا ہی تھا

بارش کے ان حسین لمحوں میں جب قوسِ قزاح بنتی ہے 
مجھے وہ شخص ان رنگوں سے بھی حسیں لگتا تھا

*یہ گرد بیٹھ جائے تو معلوم کر سکوں
آنکھیں نہیں رہیں  کہ تماشہ نہیں رہا

میں مر مٹ بھی جاؤں اس کی ایک آواز پر 
مگر وہ میرے ہر وعدے کو سرکاری سمجھتا ہے

بارش ہوئی تو گهر کے دریچے سے لگ کر ہم
چپ چاپ سوگ وار تمهیں سوچتے رہے

آ تو جاؤں مگر تمھارے خط
اہل کوفہ سے ملتے جلتے ہیں

تمھاری بخشش ہر گز نا ہوگی 
تم نے ایک سید زادے کا دل دکھایا ہے

جا تجھے حشر تک کی مہلت دی
تجھ  سے  بدلہ میرا  خدا  لے  گا  


رات بھر پڑھتا رہا ان کے خط 
اور خوب رویا جہاں لفظِ وفا آیا

بے شک ان کے در کا منگتا 
ہر در پہ نہیں جاتس

یہ فقیروں کی بزم ہے چلے آؤ میاں 
ہم بھلے لوگ ہیں اوقات نہیں پوچھتے۔

تجھے ڈھنگ سے گزار نا سکے 
معذرت اے زندگی معذرت

فقیر عشق ہوں اک در سے لگا بیٹھا ہوں
بھکاری ہوتا تو در در پے پڑا ملتا میں

باپ  کوٸی  بھی مصیبت  نہیں آنے  دیتا⁦
ماں  مرے دل میں اندھیرا نہیں ہونے دیتی

کسی کو گھر ملا حصے میں تو کسی کے حصے میں دکاں آئی 
میں گھر میں سب سے چھوٹا تھا میرے حصے ماں آئی

کیوں ناراض ہوتے ہو چکے جاتے ہیں ہم تمھاری محفل سے 
ابھی ٹوٹے ہوئے دل کے ٹکرے تو اٹھا لیں ہم

دُنیا کے لئے کُچھ بھی سہی پر تیرے لئے ہم
مُخلص کسی ماں کی دُعاؤں کی طرح ھیں

وہ میری سبھی کامیابیوں کی کنجھی ہے 
مجھے اپنی ماں کو کھونے کا بہت ڈر ہے صاحب

میری خاموشی کسی کام کی نہیں 
یعنی میں  بول کہ بتاؤں کہ ناراض ہوں میں


                Thanks For Visiting. Hope You Like it. And Keep Visiting.

Post a Comment

Previous Post Next Post